یہ الیکشن خفیہ مقامات پر ٹھپے لگانے کی صورت میں ہوا ہے۔

عرفان علی عرفان علی

یہ الیکشن خفیہ مقامات پر ٹھپے لگانے کی صورت میں ہوا ہے۔

کوئٹہ پی بی 42 کے امیدوار اور ہزارہ ڈیموکریٹک پارٹی کے چیئرمین عبد الخالق ہزارہ کی پریس کانفرنس۔

عبد الخالق ہزارہ نے کہاکہ

2024 کے عام انتخابات میں ہزارہ ڈیموکریٹک پارٹی نے قومی اور صوبائی اسمبلی کے لیےدو دو امیدوار نامزد کئےگئے۔

8 فروری کے دن پی بی 40 اور پی بی 42 حلقوں میں عوام زیادہ تعداد میں ووٹ کاسٹ کرنے نکلے۔

8 فروری کی رات پولنگ ایجنٹوں نے فارم 45 لائے۔

چند پولنگ اسٹیشنوں کے فارم 45 کی کاپیاں ہمارے پولنگ ایجنٹوں کو نہیں دیئے گئے۔

مسلم لیگ ن کے امیدوار نے ڈی آر او اور آر او کے موجودگی میں بیلٹ پیپرز پر ٹپے لگائے گئے۔

جسکی ویڈیو کلپ بھی ہمارے پاس موجود ہے۔

8 اور 9 فروری کو آر اوز کے دفاتر مکمل بند رہے۔

فارم 45 کے نتائج کے برعکس فارم 47 میں ایسے نتائج لائے گئے جس سے لگتا ہے 8 فروری کے شام 5 بجے کے بعد دوبارہ الیکشن ہوا ہے۔

یہ الیکشن خفیہ مقامات پر ٹھپے لگانے کی صورت میں ہوا ہے۔

سوچے سمجھے منصوبے کے تحت ہزارہ برادری کو اسمبلی سے دور رکھا جا رہا ہے۔

کوئٹہ شہر مختلف اقوام کا گلدستہ ہے

ہم کسی صورت کوئٹہ کے شہری اور ہزارہ قوم کی مینڈیٹ چوری کرنے نہیں دیں گے۔

 ہزارہ ڈیموکریٹک پارٹی عوامی حق کی تحفظ کیلئے اپنی سیاسی اجتماعی جہدوجہد مزید تیز کرینگے۔

کوئٹہ میں 8 فروری کے بجائے 9 فروری کو زیادہ ووٹ کاسٹ ہوئے ہیں۔

کوئٹہ میں امیدواروں کی خریداری کی منڈی لگائی گئی۔